معاملات - بیع و تجارت

India

سوال # 158027

میرے کچھ سوال ہیں:
۱- آن لائن ٹریڈنگ کے بارے میں ،ایک ویب سائٹ ہے ،شپَڑتوپتِون نام سے جس پر کچھ سامان (سونا ،چاندی ڈالر وغیرہ )کا ریٹ بتا تاہے جس کا ریٹ بدلتا رہتا ہے ،ہمیں اس میں کچھ پیسے لگا کر کچھ سیکنڈ کے اندر بتانا ہوتا ہے کہ ریٹ کم ہو گا یا زیادہ۔اگر ہماری بات کچھ سیکنڈ بعد صحیح نکلی تو ہمارا پیسہ بڑھ کر واپس ملتا ہے اور صحیح نہ ہونے پر ہمارا پیسہ کمپنی رکھ لیتی ہے ۔
براہ کرم، بتائیں کہ اس طرح کا کام کرنا صحیح ہے یا نہیں؟

Published on: Jan 25, 2018

جواب # 158027

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:436-372/N=5/1439



(۱): آن لائن ٹریڈنگ کی جو صورت سوال میں ذکر کی گئی ہے، یہ در حقیقت خرید وفروخت کی شکل نہیں ہے؛ بلکہ یہ واضح طور پر جوے کی شکل ہے ؛ کیوں کہ جواب صحیح ہونے کی صورت میں پیسہ بڑھ کر واپس ملتا ہے اور بہ صورت دیگر اصل پیسہ بھی واپس نہیں ملتا۔ اور جوا شریعت میں قطعی طور پر حرام وناجائز ہے اور اس میں جو زائد پیسے ملتے ہیں، وہ بھی حرام ہیں؛ اس لیے سوال میں مذکور آن لائن ٹریڈنگ کی شکل اختیار کرنا جائز نہیں ہے ، مسلمانوں کے لیے اس سے بچنا واجب وضروری ہے۔



قال اللّٰہ تعالی:وأحل اللہ البیع وحرم الربا الآیة (البقرة: ۲۷۵)،یٰأیھا الذین آمنوا إنما الخمر والمیسر والأنصاب والأزلام رجس من عمل الشیطن فاجتنبوہ لعلکم تفلحون( المائدة، ۹۰)،عن جابر بن عبد اللّٰہ رضي اللّٰہ عنہما قال: لعن رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم آکل الربوا وموٴکلہ وکاتبہ وشاہدیہ، وقال: ہم سواء (الصحیح لمسلم، ۲: ۷۲، ط: المکتبة الأشرفیة دیوبند)،وقال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم:إن اللہ حرم علی أمتي الخمر والمیسر(المسند للإمام أحمد،۲: ۳۵۱، رقم الحدیث: ۶۵۱۱)،﴿وَلَا تَأْکُلُوْا أَمْوَالَکُمْ بَیْنَکُمْ بِالْبَاطِلِ﴾ أي بالحرام، یعني بالربا، والقمار، والغصب والسرقة(معالم التنزیل ۲: ۵۰)، الربا فضل خال عن عوض بمعیار شرعي مشروط لأحد المتعاقدین في المعاوضة (تنویر الأبصار مع الدر والرد، کتاب البیوع، باب الربا، ۷: ۳۹۸- ۴۰۱، ط: مکتبة زکریا دیوبند)، لأن القمار من القمر الذي یزداد تارةً وینقص أخری، وسمی القمار قمارًا؛ لأن کل واحد من المقامرین ممن یجوز أن یذہب مالہ إلی صاحبہ، ویجوز أن یستفید مال صاحبہ، وہو حرام بالنص(رد المحتار، کتاب الحظر والإباحة،باب الاستبراء، فصل في البیع، ۹: ۵۷۷، ط: مکتبة زکریا دیوبند)۔ 



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات