india

سوال # 170498

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام مسئلہ ذیل کے بارے میں ایک گاوں میں مسجد موجود ہے ۔اس میں اتنی گنجائش ہے کہ گاوں کے سارے افراد جمع ہوکر نماز پڑھ سکتے ہیں ۔ لیکن حال یہ ہے کہ مسجد خالی رہتی ہے کبھی کبھی تو جمعہ کے روز بھی مسجد میں لوگ نہیں آتے ۔ اسی گاوں کے پڑوس میں ایک بڑی مسجد تعمیر کی گئی ہے اسی کو دیکھ کر اب یہ گاوں والے بھی محض نام و نمود کے لئے بطور مقابلہ اس مسجد کو شہید کرکے بڑی عالیشان مسجد تعمیر کرنا چاہتے ہیں ۔ لیکن دور دور تک اس کی ضرورت محسوس نہیں ہوتی ۔ کیونکہ اس چھوٹی مسجد میں لوگ نہیں آتے ۔بسا اوقات جمعہ میں بھی لوگ پہنچ نہیں پاتے ۔
اب یہ بتائیں کہ اس مسجد کو شہید کر کے بلا ضرورت بڑی مسجد تعمیر کرنا کیسا ہے ؟ عثمان خان سنت کبیر

Published on: May 17, 2019

جواب # 170498

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 1044-878/H=09/1440



جو لوگ مسجد کو شہید کرکے عالیشان مسجد بنانا چاہتے ہیں وہ لوگ اور آپ متفقہ طور پر مقامی یا قریبی دو تین علماء کرام اصحاب فتویٰ حضرات کو بلاکر مشاہدہ کردایں بعد مشاہدہ اور معائنہ جو حکم شرعی علماء کرام بتلادیں سب اسی پر عمل کریں۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات