عبادات - طہارت

Pakistan

سوال # 166714

اللہ سبحانہُ وتعالٰی کا احسان ہے کہ اپنے راستے میں نکلنے کی توفیق عطا فرماتے ہیں۔ کبھی کبھی ایسی جگہ تشکیل ہو جاتی ہے کہ وہاں مسجد کے ساتھ وضو اور غسل کی جگہ نہیں ہوتی۔ اور بعض اوقات رات کو احتلام ہو جاتا ہے ۔ پوچھنا ہے کہ کیا مسجد میں احتلام ہوجانے کے بعد بھی کچھ دیر تک اپنے بستر پر آرام کر سکتے ہیں؟ دوسرا یہ کہ کیا ٹھنڈ اور رات کے خوف کی وجہ سے تھوڑی دیر تک (یعنی فجر سے تھوڑا پہلے تک ) غسل کو موخر کر سکتے ہیں؟

Published on: Nov 21, 2018

جواب # 166714

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:237-147/N=3/1440



 (۱) : اگر مسجد میں کسی معتکف یا غیر معتکف کو احتلام ہوجائے تو بیدار ہونے پر جلد از جلد غسل کا ضروری سامان لے کر مسجد سے باہر ہوجائے ، رات باقی رہنے کی وجہ سے مسجد میں احتلام کی حالت میں پڑے رہنا جائز نہیں ہے۔



 (۲) : اگر آدمی مسجد میں نہ ہو اور احتلام ہوجائے تو صبح نماز فجر سے اتنا پہلے تک غسل موٴخر کرسکتے ہیں کہ غسل کے بعد نماز باجماعت مل جائے ۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات