معاملات - وراثت ووصیت

India

سوال # 146784

اگر بھائی کو والد کی وراثت میں ۹/ لاکھ نقد ملتا ہے تو بہن کو کتنا نقد ملنا چاہئے؟ والدین نہیں ہیں۔

Published on: Dec 28, 2016

جواب # 146784

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa ID: 203-181/N=3/1438



وراثت میں بیٹی کو بیٹے کی بہ نسبت آدھا حصہ ملتا ہے ، یعنی: اصحاب الفرو ض کو ان کا مقررہ حصہ دینے کے بعد جو کچھ بچتا ہے ، وہ بیٹا اور بیٹی کے درمیان اس طرح تقسیم ہوگا کہ ہر بیٹے کو دو بیٹیوں کے برابر حصہ دیا جائے گا، یعنی: اگر ایک بیٹا اور ایک بیٹی ہے تو ما بقیہ حصہ تین حصوں میں تقسیم ہوگا،۲/ حصے بیٹے کو اور ایک/ حصہ بیٹی کو ملے گا، پس صورت مسئولہ میں اگر ایک بیٹے کو ۹/ لاکھ روپے نقد ملا ہے تو بیٹی کو ساڑھے چار لاکھ روپے نقد ملے گا۔ قال اللہ تعالی: ﴿ یوصیکم اللہ في أولادکم للذکر مثل حظ الأنثیین﴾(سورة النساء، رقم الآیة: ۱۱)، ویصیر عصبة بغیرہ البناتُ بالابن الخ (الدر المختار مع رد المحتار، کتاب الفرائض، ۱۰:۵۲۲) ۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات