عقائد و ایمانیات - دعوت و تبلیغ

India

سوال # 146359

احقرکو اُوپر درج سوال نمبر میں یہ معلوم کرنا مقصود ہے کہ جیسے کسی مستحب یا غیرموکدہ عمل کو معمول بنا کر ترک کر دینا ناپسندیدہ ہوتا ہے ، جیسے کوئی تہجد کا اہتمام کرتا تھا پھر چھوڑ دیا، کیا ایسے ہی نا پسندیدگی کسی دینی کام جیسے دعوت و تبلیغ کو کرنے پھر یا ترک یا کم کردینے پر بھی ہوگی۔ اس ترک کی وجہ (۱) کوئی بیماری ہو جس سے اس کے معمولات اس کے لئے مشکل معلوم ہوتے ہوں۔
(۲) دوسری کوئی دینی مشغولی ہو جس سے اس کو زیادہ مناسبت معلوم ہوتی ہو۔اگر احکام الگ حالات کے الگ الگ ہوں تو تفصیل تحریر فرمائیں۔

Published on: Dec 8, 2016

جواب # 146359

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa ID: 280-257/M=3/1438



 



(۱، ۲) اگر کوئی شخص کسی دینی کام جیسے دعوت و تبلیغ کا معمول بنالے پھر کسی عذر کی بنا پر مثلاً بیماری وغیرہ یا اس سے اہم کسی دوسری مشغولیت کی بنا پر وہ معمول چھوٹ جائے تو اس میں حرج نہیں اور یہ نا پسندیدہ نہیں، دل میں یہ احساس رہنا چاہئے کہ اگر عذر نہ ہوتا تو اس کام کو ترک نہ کرتا اور دین کے کسی کام کو حقیر نہ سمجھا جائے بلکہ اس کی عظمت برقرار رہے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات