معاملات - بیع و تجارت

India

سوال # 162054

کیا فرماتے ہیں مفتیان اکرام مسئلہ ہذا کے سلسلہ میں؟ آج کل ایک کمپنی (XiaOmi) کے موبائل بہت بکتے ہیں بات یہ ہے کہ یہ کمپنی اپنی Sale نکالتی ہے ہفتہ میں ایک بار کچھ لوگ جو زیادہ جلدی موبائل بک کر لیتے ہیں وہ اس کو اپنے پاس منگا کر کسی موبائل کی دکان یا کسی شخص کو اس کی اصل قیمت سے ۵۰۰ سے ۱۵۰۰ روپیے اضافہ کرکے دیتے ہیں، جو شخص بک نہیں کر پاتا جلدی وہ آسانی سے لے لیتا ہے ، اسے بلیک مارکٹنگ بھی کہا جاتا ہے طلباء کے درمیان آج کل یہ بسینز زیادہ عام ہو گیا ہے ۔ کیا یہ شرعاً جائز ہے ؟

Published on: Jul 8, 2018

جواب # 162054

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:1278-1115/L=10/1439



موبائل بک کرادینے کے بعد اگر اس موبائل کو اپنے قبضہ میں لے لیا جائے اور گویا پہلا معاملہ تام ہوجائے تو اس موبائل کو آگے نفع کے ساتھ فروخت کرنے میں کوئی حرج نہیں ہے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات