عبادات - قسم و نذر

india

سوال # 157479

حضرت، میرا امتحان تھا تو میں نے نذر مانی تھی کہ اللہ مجھے پاس کردے ، میں چالیس دن کی جماعت میں جاوٴں گا ۔ پھر میں نے نتیجہ آنے سے پہلے ہی اس نذر کو کینسل کر دیا کہ میں یہ نہیں کر پاوٴں گا، تو کیا اس طرح جماعت میں جانے کی نذر کو کام ہونے سے پہلے کینسل کرنا صحیح ہے؟

Published on: Jan 15, 2018

جواب # 157479

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:384-325/D=4/1439



(۱) نذر اس عمل کی صحیح ہوتی ہے جس کی جنس عبادت مقصودہ میں سے ہو پس جماعت میں جانا ایسا عمل نہیں ہے جس کی نذر صحیح ہو لہٰذا نذر کرنے کی وجہ سے اس کا پورا کرنا آپ پر لازم نہیں ہے، آپ کو اختیار ہے کہ جماعت میں نہ جائیں۔



(۲) البتہ یہ مسئلہ الگ ہے کہ جس چیز کی نذر صحیح ہوتی ہے اس کی نذر مان لینے کے بعد پھر اس کا پورا کرنا مطابق شرط کے لازم اور ضروری ہوجاتا ہے اسے کینسل کرنے کا اختیار نہیں رہتا اور کینسل کرنے سے کینسل نہیں ہوتی۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات