Pakistan

سوال # 175902

میرا ایک سوال ہے کہ کیا کوئی شخص کسی کھانے یا پینے والی چیز پر پھونک مار سکتا ہے برکت کے حصول کے لئے وہ بھی صرف کلام پاک یا پھر درود شریف وغیرہ ؟ سوال کا جواب دیکر شکریہ کا موقع عنایت فرمائیں۔ جزاک اللّٰہ خیر

Published on: Jan 12, 2020

جواب # 175902

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 457-421/M=05/1441



گرم کھانا یا گرم مشروب کو ٹھنڈا کرنے کے لئے آواز سے پھونک مارنا خلاف ادب ہے ، حدیث میں اس سے منع وارد ہے اس سے بچنا چاہئے۔ ہاں اگر بغرض حصول برکت و شفاء قرآنی آیت یا درود شریف وغیرہ پڑھ کر پھونک مار کر دم کر دیا جائے تو مضایقہ نہیں۔ نہی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم من النفخ فی الطعام والشراب (مسند أحمد) ولا ینفخ فی الطعام والشراب (تاتارخانیہ) وعن الثانی أنہ لایکرہ النفخ فی الطعام إلا بمالہ صوت نحو أف وہو محل النہي (شامی: زکریا: ۹/۴۹۱) ۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات