عقائد و ایمانیات - بدعات و رسوم

India

سوال # 147677

مفتی صاحب ،میرا سوال یہ ہے کہ میرے چند اقارب و احباب ہیں جو میری بارات میں جانا چاہتے ہیں، اور صورتحال یہ ہے کہ اگر انہیں نہ لے جاوں تو انکی ناراضگی کا اندیشہ ہے ،اورلڑکی والے چونکہ خوشحال گھرانے سے ہیں اسلئے وہ باخوشی۴۰/۳۰ افراد پر راضی ہیں، رہنماء فرماکر ماجور ہوں۔

Published on: Feb 2, 2017

جواب # 147677

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa ID: 406-371/B=5/1438



بارات لیجانا غیروں کا طریقہ ہے، اسلام میں بس اتنا کافی ہے کہ لڑکے کے ساتھ چار پانچ آدمیوں کو لیجائیں اور نکاح پڑھا کر دولہن کو لے آئیں، اگر کچھ رشتہ دار بارات میں جانے کے لیے مصر ہیں اور انھیں نہ لے جانے میں رشتہ داری ٹوٹنے کا اندیشہ ہو تو مصلحةً انھیں ساتھ لے جاسکتے ہیں۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات