• عقائد و ایمانیات >> بدعات و رسوم

    سوال نمبر: 62410

    عنوان: مجھے کسی نے کہا ہے کہ حضور پاک کے نام پر انگوٹھے چومنا حضرت آدم علیہ السلام کی اور حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کی سنت ہے یہ بات ٹھیک ہے یا نہیں

    سوال: (۱) مجھے کسی نے کہا ہے کہ حضور پاک کے نام پر انگوٹھے چومنا حضرت آدم علیہ السلام کی اور حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کی سنت ہے یہ بات ٹھیک ہے یا نہیں؟ (۲) حضور صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے نام کر انگوٹھے چومنا جائز ہے یا ناجائز؟ جواب دلائل کے ساتھ دے دیں تو سمجھنے میں آسانی ہو گی۔جزاک اللہ.

    جواب نمبر: 62410

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 166-172/L=3/1437-U (۱) (۲) آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے نام مبارک کے ذکر کے وقت انگوٹھا چومنا کسی خاص عقیدے کے پیش نظر جائز نہیں ہے، اس بارے میں حضرت آدم علیہ السلام کا ایک عمل قصص الانبیاء وغیرہ میں مذکور ہے نیز اذان کے وقت نبی علیہ السلام کے نام مبارک یعنی أشہد أن محمدا رسول اللہ پر انگوٹھے چوم کر آنکھوں پر پھیرنے کے سلسلے میں حضرت خضر علیہ السلام وحضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ سے روایت منقول ہے، لیکن یہ تمام کی تمام روایات موضوع ہیں، علامہ شامی فرماتے ہیں، وذکر ذلک الجراحی وأطال، ثم قال: ولم یصح فی المرفوع من کل ہذا شیء․ (رد المحتار: ۲/۶۸، ط زکریا دیوبند) علامہ جراحی نے اس کو ذکر کرکے اس پر لمبی بحث کی ہے، پھر فرمایا اس سلسلے میں کوئی مرفوع حدیث ثابت نہیں ہے، علامہ سخاوی فرماتے ہیں: وحکی الخطابي في شرح مختصرة خلیل حکایة آخر غیر ما ہنا وتوسع في ذلک ولا یصح شيء من ہذا في المرفوع کما قال الموٴلف بل کلہ مختلق موضوع․


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند