• عقائد و ایمانیات >> حدیث و سنت

    سوال نمبر: 160896

    عنوان: کھانے کی دعا بسم اللہ وعلی برکة اللہ کی تحقیق

    سوال: کھانا کھانے سے پہلے کی دعا میں بسم اللہ کے بعد و علی برکة اللہ کا ثبوت ہے یا نہیں؟

    جواب نمبر: 160896

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa:953-733/sn=8/1439

    حصن حصین میں ”وعلی برکة اللہ“ یعنی ”علی“ کے ساتھ یہ دعا موجود ہے، اسی طرح مستدرک حاکم میں بھی یہ دعا ہے؛ البتہ اس میں ”وبرکة اللہ“ ہے یعنی ”علی“ کے بغیر صرف ”واو“ عاطفہ کے ساتھ۔ عن ابن عباس رضی اللہ عنہما، أن النبی صلی اللہ علیہ وسلم وأبا بکر وعمر رضی اللہ عنہما أتوا بیت أبی أیوب فلما أکلوا وشبعوا قال النبی صلی اللہ علیہ وسلم: خبز ولحم وتمر وبسر ورطب إذا أصبتم مثل ہذا فضربتم بأیدیکم فکلوا بسم اللہ وبرکة اللہ ہذا حدیث صحیح الإسناد ولم یخرجاہ․ (رقم: ۷۰۸۴، مستدرک حاکم) کنزل العمال میں شعب الایمان للبیہقی کے حوالے سے یہ روایت آئی ہے؛ البتہ اس کے اخیر میں یہ الفاظ ہیں ”فقولوا: بسم اللہ وبکرة اللہ“ (کنزل العمال، رقم: ۴۰۸۴۵) نیزدیکھیں: حاشیة تحفة الالمعی (۱/۲۴۶)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند