Miscellaneous >> Others

Question # : 58123

India

(۱) اگر کوئی شخص یا امام درگاہ جیسے اجمیر درگاہ ، نوگور درگاہ، حاجی علی درگاہ وغیرہ میں جاری سرگرمیوں میں حصہ لے یا ان کی رسومات کی حمایت کرے یا اس میں شامل ہو تو کیا وہ مشر ک ہوجائے گا؟ اور کیا ہمیں اس کو مشرک سمجھنا چاہئے؟
(۲)اگر وہ مشرک ہوجاتاہے تو کیا ہم ان کے پیچھے نماز پڑھ سکتے ہیں؟ اور کیا ہم ان کو اپنا امام بناسکتے ہیں؟ اور کیا ہم ان کو اصل امام بناسکتے ہیں؟براہ کرم، جواب دیں۔

Answer : 58123

Published on: Mar 6, 2015

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa ID: 427-427/M=5/1436-U

اگر کوئی شخص شرک میں مبتلا ہے تو ایسے شخص کے پیچھے نماز پڑھنا اور اس کو امام بنانا جائز نہیں؛ لیکن سوال میں یہ واضح نہیں کہ کوئی شخص یا کوئی امام، درگاہ میں جاری کس طرح کی سرگرمیوں میں حصہ لیتا ہے؟ اور کونسی رسومات کی حمایت کرتا ہے؟ نیز اس شخص کے عقائد کیا ہیں؟ پوری وضاحت کے ساتھ سوال کریں۔


Allah knows Best!


Darul Ifta,
Darul Uloom Deoband

Related Question