سوال # 65666

سوال: کیکڑابری جانورہے یابحری؟ بعض لوگ کہتے ہیں کہ بری جانورہے لیکن عام جانوروں کی طرح یہ خشک زمین میں نہیں رہتابلکہ اسکوایسی جگہ چاہیے ہوتاہے جوساحلی زمین ہونے کے ساتھ ساتھ پانی کی تری بھی موجودہو ، یہی وجہ ہے کہ اکثرلوگ اس مغالطے میں شکارہوتے ہیں کہ کیکڑابحری جانورہے ، حالانکہ یہ بری جانورہے ، معلوم کرناچاہتاہوں کہ یہ بات کس حدتک صحیح ہے ؟ نیز امام ابوحنیفہ کے علاوہ باقی ائمہ کے نزدیک کیکڑے کاکہاناحلال ہے یانہیں؟

Published on: Apr 28, 2016

جواب # 65666

بسم الله الرحمن الرحيم

Fatwa ID: 534-534/B=7/1437

کیکڑا بحری جانور میں شمار ہوتا ہے، احناف کے نزدیک دریائی جانوروں میں صرف مچھلی حلال ہے، حضرت امام مالک رحمہ اللہ کے نزدیک بحری خنزیرکے علاوہ سارے دریائی جانور حلال ہیں، حضرت امام شافعی رحمہ اللہ کے یہاں چار قول ملتے ہیں لیکن مفتی بہ قول یہ ہے کہ مینڈک کے علاوہ تمام دریائی جانور ان کے یہاں حلال ہیں۔
اس سے معلوم ہوتا ہے کہ اگر کوئی شافعی یا مالکی ہے تو وہ اپنے امام کے مسلک کے مطابق کیکڑا کھاسکتا ہے، وہ ان کے یہاں حلال ہے۔

واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات