• عبادات >> زکاة و صدقات

    سوال نمبر: 47050

    عنوان: میری امی کی شادی 1978میں ہوئی تھی، وقتاً فوقتاً زکاة دیتی رہیں ،لیکن پابندی سے زکاة ادا نہیں کی ،

    سوال: میری امی کی شادی 1978میں ہوئی تھی، وقتاً فوقتاً زکاة دیتی رہیں ،لیکن پابندی سے زکاة ادا نہیں کی ، اب امی کو یہ پتا نہیں کہ کونسے سال میں اس کے پاس سونا تھا۔ اب ہم اگر زکاة دینا چاہیں تو 1978 سے اب تک کس حساب سے دیں؟ اور سونے کا ریٹ بھی ہر سال بدل جاتاہے ، لہذا کوئی آسان حل بتائیں جس سے ہم پچھلی زکاة ادا کرسکیں۔ جزا ک اللہ

    جواب نمبر: 47050

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1226-1225/M=10/1434 آپ کی امی کو بہت غور وفکر کرکے ایک تخمینہ لگانا چاہیے کہ کس سال وہ مالک نصاب تھیں اور کس سال انھوں نے زکاة ادا کی تھی، جو ظن غالب ہو اُسی پر عمل کرتے ہوئے جتنے سالوں کی زکاة ادا نہیں کرسکیں ان کی زکاة ادا کردیں، اگر سونے سے زکاة ادا کریں تو ہرسال کی زکاة ادا کرنے کے بعد جو سونا بچ جائے تو اسی باقی ماندہ سونے سے ادا کردہ زکاة کی مقدار وضع کرکے اگلے سال کی زکاة ادا کریں، اسی طرح ہرسال کی زکاة کے لیے ادا شدہ سونے کو گھٹاتی چلی جائیں، جو بچے اسی کا اعتبار ہے، اگر گھٹتے گھٹتے نصاب سے کم ہوگیا تو وجوب ساقط ہوجائے گا اور اگر قیمت سے زکاة ادا کرنا چاہیں تو پچھلے سالوں کی قیمت کو سنار سے معلوم کرکے اندازہ کرسکتی ہیں۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند