• عبادات >> زکاة و صدقات

    سوال نمبر: 40652

    عنوان: كیا قرض دیے ہوئے پیسوں پر بھی زكات ہوگی؟

    سوال: میرے بیوی کے پاس تقریباً ۱۲تولے سونا ہے، بینک میں پچھلے ایک سال سے ۱۲۵،۰۰۰ روپے ہیں، میرے دوست اور رشتیداروں سے مجھے تقریباً ۱۵۰،۰۰۰ اآنے ہیں، براہ مہربانی یہ بتائیں کہ ساری زکات میں دیسکتا ہوں سونا اور پیسوں کی،یا میری بیوی کو دینا پڑیگا؟ وہ گھر پر ہی رہتی ہے اسکے پاس پیسے کہاں سے ائیں گے ؟دوسری بات میں نے جو پیسے قرض دئیے ہیں کیا اسکی بھی زکات نکالنی پڑیگی؟کتنی زکات نکالنی پڑیگی سونا پیسے ملاکر ؟براہ کرم، جواب دیں ، رمضان شرو ہونے والا ہے۔

    جواب نمبر: 40652

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1181-165/H=9/1433 بیوی کی ملکیت میں جو سونا ہے اس کی زکاة تو خود بیوی پر ہی واجب ہے، تاہم اس کی اجازت سے آپ اداء کردیں تو اس میں بھی کچھ مانع نہیں ہے جس دن زکاة اداء کریں اس دن سونے کا بازاری بھاؤ بازار سے تحقیق کرلیں اور جو رقم بیٹھے اور اس کے علاوہ یہی جو رقم قرض میں دے رکھی ہے وہ بلکہ اور جو بھی جو مالِ زکاة آپ کے پاس ہو سب کی مجموعی رقم جوڑلیں اور کل رقم کا ڈھائی فیصد حساب لگاکر زکاة کی ادائیگی میں دیدیں۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند