• عبادات >> زکاة و صدقات

    سوال نمبر: 2358

    عنوان:

    میرا سوال زکات کی ادائیگی کے بارے میں ہے ، میں نے کسی کو قرض دیاہے، اس کے گھر کے حالات ابھی ٹھیک نہیں ہو ئے ہیں اور وہ قرض میں ڈوبا ہواہے، کبھی کبھی گھرمیں کھانے کو کچھ مشکل سے ہوپاتا ہے تو کیا میں اپنے قر ض میں سے جو قر ض مجھے اس سے واپس لینا ہے، اس کو زکات دے سکتاہوں؟

    سوال:

    میرا سوال زکات کی ادائیگی کے بارے میں ہے ، میں نے کسی کو قرض دیاہے، اس کے گھر کے حالات ابھی ٹھیک نہیں ہو ئے ہیں اور وہ قرض میں ڈوبا ہواہے، کبھی کبھی گھرمیں کھانے کو کچھ مشکل سے ہوپاتا ہے تو کیا میں اپنے قر ض میں سے جو قر ض مجھے اس سے واپس لینا ہے، اس کو زکات دے سکتاہوں؟

    جواب نمبر: 2358

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 593/ ل= 593/ ل

     

    قرض معاف کرنے سے زکوٰة ادا نہیں ہوتی بلکہ اس کا طریقہ یہ ہے کہ مقروض کو زکوٰة کی رقم دے کر اس روپئے کا مالک و قابض بنادے اور جب وہ اس کا مالک ہوجائے تو اس سے اپنا قرض مانگ لے اگر نہ دے تو جبراً چھین لینا بھی جائز ہے وحیلة الجواز أن یعطي مدیونہ الفقیر زکاتہ ثم یأخذھا عن دینہ ولو امتنع المدیون مدّ یدہ وأخذھا لکونہ ظفر بجنس حقہ (الدر المختار مع الشامي: ج۳/ ۱۹۱، ط زکریا دیوبند)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند