• معاشرت >> عورتوں کے مسائل

    سوال نمبر: 611258

    عنوان:

    حیض كے ایام كب سے شمار ہوں گے

    سوال:

    سوال : ایک عورت کو ہر ماہ حیض میں یہ صورت حال پیش آتی ہے کہ اولاً کچھ دنوں تک بہت معمولی خون آتا رہتا ہے، اور کبھی تو بالکل بند ہوجاتا ہے (یعنی ایک دن بہت معمولی خون آیا پھر بند ہو گیا، پھر پانچ دنوں کے بعد آیا اور بند ہو گیا، پھر تین دنوں کے بعد آیا اور بند ہوکر دسویں دن پھر مستقل طور پر شروع ہوگیا، یہ صورت کبھی کبھار پیش آتی ہے) پھر کبھی چار دن کبھی پانچ دن اور کبھی نو دنوں تک یہ صورت حال رہنے کے بعد باقاعدہ طور پر خون جاری ہوتا ہے، اور حیض کی علامات مثلاً پیروں میں درد، پیٹ میں درد، کمزوری وغیرہ اسی وقت پائی جاتی ہیں، اور یہ خون عام طور پر دس دنوں تک جاری رہتا ہے، اب سوال یہ ہے کہ حیض کے ایام کب سے شمار کیے جائیں..؟ شروع سے ہی یا یا باقاعدہ طور پر خون کے جاری ہونے کے وقت سے؟

    واضح رہے کہ اس عورت کے کوئی عادت مقرر نہیں، نیز اولاً تھوڑا تھوڑا خون مدت طہر کے پورا ہونے کے بعد ہی جاری ہوتا ہے۔

    جواب نمبر: 611258

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa: 1037-878/B=09/1443

     شروع سے ہی لے كر حیض شمار ہوگا‏، اور دس دن تك حیض شمار ہوگا‏، اِن دس دنوں میں نماز روزہ نہیں كریں گی۔ دس دن كے بعد غسل كركے پھر نماز روزہ جاری كریں گی۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند