• معاشرت >> عورتوں کے مسائل

    سوال نمبر: 41558

    عنوان: اگر دو بچوں کے درمیان مناسب وقفہ رہے اور اس کی خاطر کوئی عارضی مناسب مانع حمل تدبیر اختیار کرلے تو گنجائش ہے،

    سوال: اگر کسی کو یا چھوٹے بچے ہوں تو کیا یہ عورت ولادت کو روکنے کے لیے دوا کا استعمال کرسکتی ہے؟ اگر چھوٹے بچے ہوں تو کیا دوا استعمال کرسکتی ہے؟کیوں کہ بچے چھوٹے ہیں ، اس کے لیے پالنا مشکل ہے اور نوکر بھی نہیں رکھ سکتی؟

    جواب نمبر: 41558

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1582-1076/H=11/1433 اگر دو بچوں کے درمیان مناسب وقفہ رہے اور اس کی خاطر کوئی عارضی مناسب مانع حمل تدبیر اختیار کرلے تو گنجائش ہے، حمل وولادت کے سلسلہ کو مستقل طور پر ختم کرنے کی اجازت نہیں، نوکر رکھنے کی عام مسلمانوں میں استطاعت بھی نہیں اور جن میں ہے وہ بھی عامةً اِس غرض (بچوں کی پرورش) کے لیے نوکر نہیں رکھتے بلکہ خواتین صالحات، ماں بہنیں ہی انتہائی خوش دلی سے گھروں میں اس خدمت کو انجام دیتی ہیں اور زندگی بھر اس سعادت کے حصول پر اپنے اپنے گھرانوں کو نمونہٴ جنت بنائے رکھتی ہیں، شریف اور باعزت خاندانوں میں الحمد للہ یہی طریقہٴ حسنہ چلا آتا ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند