• معاشرت >> عورتوں کے مسائل

    سوال نمبر: 165023

    عنوان: اگر عورت کو ایام حیض یاد نہ ہو تو کیا کرے؟

    سوال: ایک عورت حنفی ہے ، پہلے وہ صحیح سے اپنی ماہواری پر توجہ نہیں دیتی تھی، اب اس کو حیض کے بارے میں معلومات ہوئی ہیں ، مگر اس کو خود اپنی ماہواری کے ایام کے بارے میں پتا نہیں ہے یا دو ماہواریوں کے درمیان مدت طہارت کے بارے میں پتا نہیں ہے، اس کو کچھ یا نہیں ، اس کو اس بارے میں بہت زیادہ وسوسہ آتاہے اور ایک دن میں کئی مرتبہ غسل کرتی ہے، سوال یہ ہے کہ اس کو کیا کرنا چاہئے؟

    جواب نمبر: 165023

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa:19-146/L=2/1440

    حیض کی اقل مدت تین دن تین رات اور اکثرِ مدت دس دن دس رات ہے اور دوحیضوں کے درمیان طہر کی اقلِ مدت پندرہ دن ہے ،اس خاتون کوآپ یہ مشورہ دیدیں کہ وہ ”بہشتی زیور“ کا مطالعہ کرکے حیض کے مسائل کو معلوم کرلے،اور پھر اس کے مطابق عمل کرے ،اگر حیض کے مسائل کا علم نہ ہونے کی وجہ سے کوئی بات پیش آگئی ہو تو اس کو لکھ کر معلوم کرلیا جائے،جہاں تک غسل کا مسئلہ ہے تو جب غسل کرنے کے بعد اطمینان ہوجائے کہ پانی پورے بدن پر پہونچ چکا ہے تو وسوسہ کی طرف توجہ دینے کی ضرورت نہیں اس سے آدمی وسوسہ کا مریض ہوسکتا ہے۔ ”قولہ: (لطمأنینة القلب) لأنہ أمر بترک ما یریبہ إلی ما لا یریبہ، وینبغي أن یقید ہذا بغیر الموسوس، أما ہو فیلزمہ قطع مادة الوسواس عنہ وعدم التفاتہ إلی التشکیک لأنہ فعل الشیطان وقد أمرنا بمعاداتہ ومخالفتہ“․ (شامي: ۱/۲۴۰)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند