• عبادات >> اوقاف ، مساجد و مدارس

    سوال نمبر: 64112

    عنوان: کیا مسجد شہید کرکے دوسری جگہ بنائی جاسکتی ہے؟

    سوال: ہم نے ایک مسجد کی بنیاد رکھوائی کہ دارالعوم کے ایک عالم کے ہاتھ سنگ بنیاد ہوا جس پردس سا ل با جماعت نماز پڑھی گئی ، کیا ہم اس مسجد کو وہاں سے شہید کرکے کسی دوسری جگہ بنا سکتے ہیں مسجد فی الحال مدرسے کے بیچ میں آگئی ہے ۔ اب اسکو وہاں با ہر لے جانا چاہتے ہیں۔ براہ کرم، جواب دیں۔

    جواب نمبر: 64112

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 412-412/Sd=6/1437 جو مسجد ایک بار مسجد شرعی ہوجاتی ہے، وہ تا قیامت مسجد ہی رہتی ہے، اُس کی مسجدیت کو ختم نہیں کیا جاسکتا،لہذا صورت مسئولہ میں مذکورہ مسجد کو شہید کر کے دوسری جگہ منتقل کرنا جائز نہیں ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند