• معاشرت >> طلاق و خلع

    سوال نمبر: 69130

    عنوان: غیر مدخول بہا عورت ایک طلاق ہی سے بائنہ ہو جاتی ہے

    سوال: میرا نکاح ۲۰۱۴ء میں ہوا اور ۲۰۱۶ء میں بغیر رخصتی کے طلاق ہوگئی، طلاق کا معاملہ یوں ہوا کہ میں نے ۱۲/ ماچ ۲۰۱۶ء کو ایک ہی طلاق دی تھی مگر اس کے بعد ابھی تک ہمارے درمیان رابطہ نہیں ہوا ، یعنی ایک طلاق کے بعد رجوع کرنے کی مدت بھی گذر گئی مگر میں نے دوسری اور تیسری طلاق نہیں دی، میرا آپ سے سوال ہے کہ کیا اب ہمارا شریعت کی روشنی میں حلالہ کے بغیر ایک دوسرے سے نکاح ہو سکتا ہے یا نہیں؟

    جواب نمبر: 69130

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 824-824/B=11/1437 غیر مدخول بہا عورت کو ایک طلاق دینے سے ہی وہ بائنہ ہو جاتی ہے، اس میں حلالہ کی ضرورت نہیں، اگر اس سے دوبارہ نکاح کرنا چاہیں تو کرسکتے ہیں، حلالہ تو تین طلاق دینے کی صورت میں ہوتا ہے۔ غیر مدخول بہا عورت ایک طلاق کے بعد دوسری اور تیسری طلاق کی محل نہیں رہتی ہے، وہ ایک ہی طلاق میں بائنہ ہوجاتی ہے ہاں اگر کوئی غیر مدخول بہا عورت کو ایک ہی جملہ میں تین طلاقیں دیدے تو اس صورت میں تینوں طلاقیں واقع ہوکر مغلظہ ہوجاتی ہے، اس صورت میں حلالہ کی ضرورت ہوگی۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند