• معاشرت >> طلاق و خلع

    سوال نمبر: 600378

    عنوان: تعلیق كے بعد اگر عورت وہ كام نہ كرے جس پر طلاق معلق ہے تو كیا حكم ہے؟

    سوال:

    ایک شخص جو کہ دوسرے شہر میں نوکری کرتا ہے جب وہ اپنے گھر آتا ہے اس کی بیوی میکے گئی ہوتی ہے ، وہ اسے فون کر کے کہتہ کہ گھر آجاؤ تو اس بات پر کہ وہ کہتی کل آجاؤں گی، شوہر چونکہ اپنی بیوی سے ملنے کے لیے بے قرار ہوتا ہے اس لیے اسے کہتا ہے کہ اگر تم صبح سے پہلے گھر نہ آئی تو میری طرف سے طلاق، اور وہ فوراً گھر واپس آجاتی ہے انکے درمیان ہمبستری بھی ہوتی ہے اور ایک بچہ بھی ھے اس وقت اسے یہی لگتا ہے کہ میں نے جس مقصد کے لیے اس نے کہا تھا کہ وہ گھر آجائے وہ مقصد پورا ہوگیا اور اس کے بعد اسے یاد بھی نہیں تھا کہ کوئی لڑائی بھی ہوئی تھی کہوں کہ اس وقت اسکی نیت بیوی کو گھر بلانے کی تھی۔ لیکن اب کسی وجہ سے اسے یہ واقع یاد آیا تو اس ہوالے سے رہنمائی فرما دیں۔

    جواب نمبر: 600378

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa:99-76/sd=3/1442

     صورت مسئولہ میں چونکہ شوہر کی تعلیق کے بعد بیوی فورا، یعنی صبح سے پہلے گھر آگئی، اس لیے شرط نہ پائے جانے کی وجہ سے کوئی طلاق واقع نہیں ہوئی۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند