• معاشرت >> طلاق و خلع

    سوال نمبر: 59521

    عنوان: طلاق معلق كرنى كى بعد يه سمجھ كر كہ شرط واقع ہوگئی طلاق دیدی

    سوال: سوال- عرض ھیکہ میرا اپنی زوجہ سے جھگڑا ھوا- جس پر وہ اپنے میکے جانے لگی میں نے اسے کہا کہ اگر ابھی تم دروازہ سے باھرنکلی تو میں تمھیں طلاق دے دونگا.مجھے لگاکہ وہ دروازہ سے باھر نکل گئی جس پر میں نے اسے تین طلاق دیدی - بعد میں مجھے پتہ چلا کہ وہ دروازہ سے باھر نہیں نکلی تھی بلکہ دروازہ پر رک گء تھی.. ایسی صورت میں کیا حکم ھے ؟دوسری بات یہ کہ میں نے اسے یہ کہا تھا کہ اگر ابھی تم دروازے سے باھر نکلی تو طلاق دے دونگا-اب وہ گھر میں ھی تھی اور دروازہ سے باھر نھیں نکلی تھی- میں نے گھر سے باھر نکلنے پر طلاق کا کھاتھا.اب وہ گھر میں ھی موجود تھی اسکا کیاحکم ھے ؟

    جواب نمبر: 59521

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 571-536/Sn=8/1436-U صورت مسئولہ میں جب آپ نے تین طلاق دیدی اگرچہ یہ اقدام آپ نے کسی غ لط فہمی کی بنا پر کیا ہے تب بھی آپ کی بیوی پر ت ینوں طلاق واقع ہوگئیں، اب آپ دونوں کے لیے ایک ساتھ ازدواجی زندکی گزارنا شرعاً جائز نہیں ہے، بعد عدت بیوی ابنے نفس کی مختار ہے وہ آپ کے سوا جس سے چاہے نکاح کرسکتی ہے، ”رجل لہ امرأتان أحدہما زینب واسم الأخر ی عمرة فقال: یا زینب! فأجابتہ عمرة، فقال: أنت طالق ثلاثا طلقت المجیبة (فتاوی ہندیة: ۱/۳۵۸، زکریا) وانظر فتاوی دارالعلوم دیوبند (۹/ ۲۶۲، سوال: ۲۵۱، نیز ص: ۲۹۸، سوال: ۲/۲۹۸، ط: مکتبہ دارالعلوم)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند