• معاشرت >> طلاق و خلع

    سوال نمبر: 58135

    عنوان: اگر کسی شخص کو شبہ ہو یا اسے یاد نہ رہا ہو كہ لفظ طلاق کہا یا نہیں؟

    سوال: اگر کسی شخص کو شبہ ہو یا اسے یاد نہیں آرہا ہو کہ آیا اس نے لفظ طلاق کہا ہے یا نہیں کیوں کہ وہ تنہا تھا اوراسے یاد نہیں ہے کہ اس کے ماغ میں طلاق کا لفظ آیا تھا یا اس نے زبان سے وہ لفظ کہا تھا تو ایسی صورت حال میں نکاح خطرے میں پڑے گا یا نہیں؟ براہ کرم، شبہ دور فرمائیں۔

    جواب نمبر: 58135

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 426-426/M=5/1436-U

    شریعت میں حکم کا مدار یقین پر ہوتا ہے، محض شک وشبہ پر نہیں، پس اگر شوہر کو طلاق دینے کا اقرار نہیں ہے یا طلاق دینے پر شرعی شہادت موجود نہیں ہے تو صرف شبہ کی بنا پر وقوع طلاق کا حکم نہیں ہوگا، بلکہ نکاح برقرار رہے گا۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند