• معاشرت >> طلاق و خلع

    سوال نمبر: 40389

    عنوان: شرعی حلالہ

    سوال: براہ کرم، شرعی حلالہ کا طریقہ بتادیں۔

    جواب نمبر: 40389

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1389-1029/D=9/1433 اگر کسی شخص نے بیوی کو تین طلاق دیدیا تو بیوی شخص مذکور پر حرام ہوگئی، اب دوبارہ اس سے نکاح نہیں ہوسکتا، مطلقہ پر مکمل تین ماہواری کے ذریعہ اور اگر حاملہ ہو تو وضع حمل کے ذریعہ عدت پوری کرنا واجب ہے، عدت پوری کرنے کے بعد مطلقہ کے لیے شخص مذکور (پہلے شوہر) کے علاوہ کسی بھی مرد سے نکاح کرنا جائز ہے، اگر وہ کسی دوسرے شخص سے نکاح کرلیتی ہے پھر دوسرا شوہر بعد ہمبستری کسی وجہ سے طلاق دیدیتا ہے یا ناگاہ اس کی وفات ہوجاتی ہے، تو عورت پر دوبارہ عدت کرنی واجب ہے اس عدت کے پورا ہونے کے بعد اسے پھر کسی سے نکاح کرنے کا حق حاصل ہوجائے گا، اس وقت اگر شوہر اول سے نکاح کرنا چاہے تو اس کی بھی اجازت ہے، اس کو حلالہ شرعیہ کہتے ہیں، یعنی پہلے شوہر کی حرمت غلیظہ کے ختم ہونے کے لیے ضروری ہے کہ دوسرا شوہر نکاح کرکے ہمبستری بھی کرے، پھر کسی وجہ سے جدائی ہوجائے تو بعد عدت پہلے شوہر سے نکاح کرنا جائز ہوگا، بدون اس کے نہیں۔ اسی حکم کو قرآن پاک کی اس آیت میں بیان کیا گیا ہے۔ ”فَاِنْ طَلَّقَہَا فَلَا تَحِلُّ لَہُ مِنْ بَعْدُ حَتَّی تَنْکِحَ زَوْجًا غَیْرَہُ“ (البقرة)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند