• معاشرت >> طلاق و خلع

    سوال نمبر: 38595

    عنوان: کلما طلاق کا مسلہ

    سوال: ایک آدمی کی ایک عورت کے ساتھ منگنی ہوئی اور کچھ عرصے کے بعدکسی کے سامنے ا سں شخص سے مذکورہ عورت کے بارے میں بات چل رہی تھی اس نے کہا کہ میں اس سے نکاح کرو تو کلما طلاق اور اس نے نیت باقیوں کی کی کہ اگر اس سے نکاح کروں تو باقی عورتوں کو طلاق اور اب اس کا کیا حکم ہے؟کیا اس عورت سے نکاح جائز ہے یا نہیں؟ اور باقی عورتوں کے بارے میں کیا حکم ہے؟

    جواب نمبر: 38595

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1021-846/B=6/1433 ”کلما طلاق“ شریعت اسلام میں کوئی طلاق نہیں، یہ لغو کلام ہے اس کہنے سے نہ اس عورت پر طلاق واقع ہوگی نہ باقی عورتوں پر طلاق واقع ہوگی ۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند