• معاشرت >> طلاق و خلع

    سوال نمبر: 35041

    عنوان: میں انیلا ولد شیر علی میری دوسال قبل اکر م ولد محمد اسلم سے شادی ہوئی مجہے چاہتی ہوں میرے شہر اکرم مجہے ایک بار طلاق دے چکے ہیں اسٹامپ پیپر پر اور اس سے پہلے لڑائی جہگڑے میں کئی بار بول چکے ہیں کہ میں اسے طلاق دے دودوں گا اکرم اور میری نانی ایک ہیں میں اپنی امی کے گہر تہی تو اکرم نے میری امی سے کہا ں کہ اگر انیلا نانی کے گہر گئی تو میرے نکاح سے خارج ہو جائیگی ۔لہذا میں نہیں گئی لیکن اایک ہفتہ کے بعد اکرم مجہے اپہنے ساتہہ نا نی کے گہر لے گئے۔اس طرح ایک بار پہر بولا کہ میں اپنے امی کے گہر گئی یا میں اپنی بچی اپنے ما ں باپ یا بہن بہائیوں کو دی تو میرے نکاح سے خارج ہو جاوگی لیکن پہر خود چہوڑکر گئے او ر پہر دونو ں باتو ں کے بارے میں پوچہا گیا تو کہا میں اپنے الفاظ واپس لیتاہو ں ۔ایک مرتبہ پہر لڑئی میں بولے انیلا میرے سامنے کہڑی ہو میں ابہی تمہیں طلاق دیتا ہو ں لیکن میں سامنے نہیں آئی اور پہر ہمارا راضی نامہ ہو گیا اور میں اپنے سسرال چلی گئی لیکن ابہی پہر لڑای میں کئی لوگو ں سے کتنی بار بول چکے ہیں کہ میں نہیں رکہوں گا طلاق دے دوں گا

    سوال: میں انیلا ولد شیر علی میری دوسال قبل اکر م ولد محمد اسلم سے شادی ہوئی مجہے چاہتی ہوں میرے شہر اکرم مجہے ایک بار طلاق دے چکے ہیں اسٹامپ پیپر پر اور اس سے پہلے لڑائی جہگڑے میں کئی بار بول چکے ہیں کہ میں اسے طلاق دے دودوں گا اکرم اور میری نانی ایک ہیں میں اپنی امی کے گہر تہی تو اکرم نے میری امی سے کہا ں کہ اگر انیلا نانی کے گہر گئی تو میرے نکاح سے خارج ہو جائیگی ۔لہذا میں نہیں گئی لیکن اایک ہفتہ کے بعد اکرم مجہے اپہنے ساتہہ نا نی کے گہر لے گئے۔اس طرح ایک بار پہر بولا کہ میں اپنے امی کے گہر گئی یا میں اپنی بچی اپنے ما ں باپ یا بہن بہائیوں کو دی تو میرے نکاح سے خارج ہو جاوگی لیکن پہر خود چہوڑکر گئے او ر پہر دونو ں باتو ں کے بارے میں پوچہا گیا تو کہا میں اپنے الفاظ واپس لیتاہو ں ۔ایک مرتبہ پہر لڑئی میں بولے انیلا میرے سامنے کہڑی ہو میں ابہی تمہیں طلاق دیتا ہو ں لیکن میں سامنے نہیں آئی اور پہر ہمارا راضی نامہ ہو گیا اور میں اپنے سسرال چلی گئی لیکن ابہی پہر لڑای میں کئی لوگو ں سے کتنی بار بول چکے ہیں کہ میں نہیں رکہوں گا طلاق دے دوں گا

    جواب نمبر: 35041

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی(ب): 1800=1450-11/1432 اسٹامپ پیپر پر جو طلاق ایک دفعہ دے چکے ہیں، اس کی ایک کاپی سوال کے ساتھ بھیجنی چاہیے، بعد میں جو یہ جملہ لکھا ہے ”اگر انیلا نانی کے گھر گئی تو میرے نکاح سے خارج ہوجائے گی“ اس کہنے کے بعد جب انیلا نانی کے گھر چلی گئی خواہ کسی کے ساتھ گئی ہو اس پر ایک طلاق بائن واقع ہوگئی۔ یہ جملہ قسم ہے قسم کھانے کے بعد الفاظ واپس نہیں ہوتے، میں نہیں رکھوں گا، طلاق دیدوں گا کے لفظ سے کوئی طاق واقع نہ ہوئی۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند