• معاشرت >> طلاق و خلع

    سوال نمبر: 23234

    عنوان: میرا نام ’مہ‘ ہے۔ کچھ دن پہلے میرے شوہر نے مجھے غصہ میں آکر کہا کہ ” میں نے تمہیں آزادکیا“ یہ بات انہوں نے تین بار کہی ، پر اب وہ کہتے ہیں کہ نہیں، میں مذاق کررہاتھا، براہ کرم، بتائیں کہ اس سے طلاق ہوئی یا نہیں؟ مجھے اس بارے میں فتوی لینا ہے کہ کیا اس طرح طلاق ہوتی ہے یا نہیں؟ 

    سوال: میرا نام ’مہ‘ ہے۔ کچھ دن پہلے میرے شوہر نے مجھے غصہ میں آکر کہا کہ ” میں نے تمہیں آزادکیا“ یہ بات انہوں نے تین بار کہی ، پر اب وہ کہتے ہیں کہ نہیں، میں مذاق کررہاتھا، براہ کرم، بتائیں کہ اس سے طلاق ہوئی یا نہیں؟ مجھے اس بارے میں فتوی لینا ہے کہ کیا اس طرح طلاق ہوتی ہے یا نہیں؟ 

    جواب نمبر: 23234

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی(ب):1175=939-7/1431

    شوہر کا قول کہ ”میں نے تمھیں آزاد کردیا، ہمارے عرف میں بمنزلہ صریح کے ہے، لہٰذا صورت مسئولہ میں عورت پر تین طلاقیں پڑگئیں، اگرچہ شوہر نے مذاقاً کہا ہو، اس لیے کہ حدیث میں ہے کہ مذاقا طلاق دینے سے بھی حقیقت میں طلاق واقع ہوجاتی ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند