• عبادات >> طہارت

    سوال نمبر: 41615

    عنوان: غسل كے وقت پانی پر دم كرنا

    سوال: میرا سوال یہ ہے کہ میری گھر والی ہم بستری کرنے کے بعد یا حیض کے بعد جب غسل کرتی ہے تو کچھ پڑھ کر یعنی کلمہ پانی میں دم کرکے نہاتی ہے، کیا یہ صحیح طریقہ ہے؟ اگر صحیح ہے تو کیا پڑھ کر نہانا ہے، میں نے تو جماعت سے یہ سکھا ہے کہ نیّت کرنا ، ناک میں پانی ڈالنا ، کلّی کرنا ، اور سارے بدن میں پانی بہانا ایک بال برا بر بھی سوکھا نہ ہو ، صرف یہی سکھا ہے۔ براہ کرم، اس بارے میں رہنمائی فرمائیں ۔

    جواب نمبر: 41615

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 923-918/N=10/1433 جنابت یا حیض کے غسل کے پانی پر کلمہ طیبہ یا کچھ اور پڑھ کر دم کرنا شریعت سے اس کا کوئی ثبوت نہیں اس لیے یہ عمل نہ فرض ہوگا نہ واجب نہ مسنون اور نہ مستحب بلکہ اگر فرض یا واجب وغیرہ سمجھ کر کیا جائے تو یہ ناجائز وبدعت ہوگا قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم من أحدث في أمرنا ہذا ما لیس منہ فہو رد متفق علیہ (مشکاة شریف: ۲۷) ہاں اگر آپ کی اہلیہ یہ عمل کسی معتبر اور باشرع عامل یا بزرگ کے بتانے پر کسی بیماری میں بطور علاج کرتی ہیں تو شرعاً اس کی گنجائش ہوگی۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند