• عبادات >> صوم (روزہ )

    سوال نمبر: 60378

    عنوان: انجانے میں سحری كا وقت ختم ہونے كے بعد سحری كھالی

    سوال: آج ماہ رمضان کا پہلا روزہ تھا، ہم نے ساری سنتوں کے ساتھ تیاری کی، عشاء کی نماز پڑھی ، تراویح پڑھی، سحری کا وقت موبائل میں دیکھا تو 4:27تک تھا ، پھر سحری کی نیت سے سوگئے ، سحری کے وقت چار بجے اٹھے ، چار 4:25تک ہم تین لوگوں نے سحری کی اور نماز کے لیے چلے گئے ، مسجد گئے تو نماز ہوچکی تھی، پتا چلا کہ نماز کا وقت :4:5پر تھا ، ہم نے اپنی ادا نماز پڑھی اور واپس آگئے۔ اب مسئلہ یہ ہے کہ کی ہمارا روزہ رکھنا درست ہے یا نہیں؟ قبول ہوگا یا نہیں؟ یہ تو اللہ کے اختیارمیں ہے۔ اس بارے میں کیا کوئی حدیث ہے؟ براہ کرم، رہنمائی فرمائیں۔

    جواب نمبر: 60378

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 995-795/D=9/1436-U

    مذکورہ صورت میں آپ لوگوں کو ایک ایک روزے کی قضا رکھنی ہوگی، کیونکہ روزے کے لیے صبح صادق سے مغرب تک بغیر کھائے پئے رہنا ضروری ہے اور آپ لوگوں نے صبح صادق کے بعد کھا لیا ہے اگرچہ وہ سحری کے گمان میں کھایا ہے لیکن وقت تو نکل چکا تھا، لہٰذا روزے کی قضا تو بہرحال واجب ہے، البتہ آپ لوگوں کے لیے حکم یہ بھی تھا کہ رمضان کے احترام میں بقیہ پورے دن روزہ داروں کی طرح بغیر کھائے پئے رہتے۔ اللہ تعالی شان کریمی سے حسن نیت پر کچھ ثواب عطا فرمادیں تو بعید نہیں۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند