• عبادات >> صوم (روزہ )

    سوال نمبر: 59713

    عنوان: تراویح سنانے کے بعد مسجد سے جو پیسے ملتے ہیں وہ تو لینا جائز ہے ہی نہیں؟

    سوال: تراویح سنانے کے بعد مسجد سے جو پیسے ملتے ہیں وہ تو لینا جائز ہے ہی نہیں؟ (۱) لیکن مجھے یہ معلوم کرنا ہے کہ پیسوں کے علاوہ جو میٹھائی اورجوڑا ملتا ہے وہ لینا جائز ہی یا نہیں؟ (۲) اور اگر مسجد کے ذمدار کے علاوہ لوگ اپنی طرف سے دیں تو وہ لے سکتے ہیں؟جواب ضرور دیں کیوں کہ (۳) آپ نے اب تک میرے پہلے سوال کا جواب نہیں دیا ہے ۔

    جواب نمبر: 59713

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 842-671/D=8/1436-U (۱) قرآن کی اجرت اور معاوضہ کے طورپر خواہ ہدیہ تحفہ اور انعام کے نام پر ہو کچھ لینا منع ہے، خواہ رقم کی شکل میں ہو یا جوڑے کی شکل میں۔ مٹھائی عام لوگوں کو بھی تقسیم ہوتی ہو تو امام صاحب کو بھی دی جاسکتی ہے، زاید بھی دی جاسکتی ہے حرج نہیں۔ (۲) ختم قرآن کے دن اور موقعہ پر احتراز کرنا چاہیے، دوسرے مواقع پر ہدیہ لینا دینا پسندیدہ عمل ہے، خدام دین اور ائمہ کرام کو ہدایا سے نوازنا بہت مستحسن عمل ہے۔ (۳) آپ کا پہلا سول کیا تھا؟ ID کے حوالہ سے اس کی یاد دہانی کرائیں یا دوبارہ سوال بھیجیں۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند