• عبادات >> صوم (روزہ )

    سوال نمبر: 14594

    عنوان:

    ایک شخص جن کی عمر اسی سال ہے ان کو ہائی بلڈ پریشر کی شکایت ہے نیز دل کی بھی بیماری ہے (انھوں نے بائی پاس آپریشن کرایا ہے)ان کو مستقل دوائیں لینی پڑتی ہیں کیا ان کے لیے رمضان کے مہینہ میں روزہ نہ رکھنا درست ہوگا (کیوں کہ گرمی کے موسم کا روزہ بہت طویل ہوتاہے) اور وہ ان کے بدلہ میں فدیہ دے دیں؟

    سوال:

    ایک شخص جن کی عمر اسی سال ہے ان کو ہائی بلڈ پریشر کی شکایت ہے نیز دل کی بھی بیماری ہے (انھوں نے بائی پاس آپریشن کرایا ہے)ان کو مستقل دوائیں لینی پڑتی ہیں کیا ان کے لیے رمضان کے مہینہ میں روزہ نہ رکھنا درست ہوگا (کیوں کہ گرمی کے موسم کا روزہ بہت طویل ہوتاہے) اور وہ ان کے بدلہ میں فدیہ دے دیں؟

    جواب نمبر: 14594

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1142=1142/م

     

    اگر وہ شخص ضعف یا مرض کی وجہ سے روزہ نہیں رکھ سکتے، بیماری بڑھ جانے کا خوف ہے، مسلمان ڈاکٹروں کی تجویز ہے یا تجربہ کی بنا پر غلبہ ظن ہے تو ایسی صورت میں ان کے لیے رمضان کا روزہ نہ رکھنا جائز ہے، لیکن جب تک صحت کی توقع ہو، فدیہ دینا کافی نہیں، بلکہ صحت (تندرستی) کے بعد قضا لازم ہے، پھر اگر صحت کی امید نہ رہے اور مرض کا ازالہ نہ ہو تو ان روزوں کا فدیہ دیدے، اور ایک روزے کا فدیہ صدقہ فطر کے برابر ہے، ہکذا فی کتب الفقہ۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند