• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 69068

    عنوان: الاشباہ و النظائر میں ایک مسئلہ سے متعلق

    سوال: کتاب المسائل میں لکھا ہے کہ اگر کسی کی کئی نمازیں قضاء ہوئی تھیں اور اسے وہ پڑھنی ہوں تو یہ نیت کرے کہ مثلاً میں ظہر کی پہلی نماز کی قضاء پڑھ رہا ہوں، مصنف نے الاشباہ و النظائر کاحوالہ دیا۔ کیا اگر کوئی اس طرح کی نیت نہ کرے تو اسکی نماز ہوجائیگی؟اور یہ بھی بتا دیجئے کہ کیا مفتی محمد سلمان پوری مستندعالمِ دین ہیں یانہیں۔

    جواب نمبر: 69068

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 812-812/B=11/1437 جس شخص کے ذمہ بہت سے دنوں یا مہینوں یا سالوں کی نمازیں باقی ہوں تو اس کے لیے قضاء عمری پڑھنے کا دو طریقہ مفتیان نے بتایا ہے یا تو یوں نیت کرے کہ میں اپنی قضا نمازوں میں سب سے پہلی ظہر پڑھتا ہوں، اپنی قضا نمازوں میں سب سے پہلی عصر پڑھتا ہوں یا یوں نیت کرے کہ میں اپنی قضا نمازوں میں سب سے آخری ظہر پڑھتا ہوں، یا سب سے آخری عصر پڑھتا ہوں۔ اگر کوئی اس طرح نیت نہ کرے بالترتیب قضا کرتا رہے تب بھی اس کی قضا درست رہے گی۔ مولانا مفتی محمد سلمان صاحب منصور پوری مستند عالم و مفتی ہیں ان کی کتاب کتاب المسائل بھی معتبر ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند