• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 63893

    عنوان: کیا نماز کی کمی کا اثر پوری زندگی پر پڑتا ہے؟

    سوال: ہم نے اپنے بڑوں سے سنا ہے کہ نماز کی کمی کا اثر پوری زندگی پر پڑتاہے، اگر کوئی ٹھوکر بھی لگے تو اپنی نماز کو دیکھو، آپ سے گذارش ہے کہ رہنمائی فرمائیں کہ کس طرح نماز میں اپنی کمی کو تلاش کر یں اور کس طرح اپنی نماز پہ نگراں مقرر کریں؟ چند دفعہ نماز کسی عالم کو دکھانا اور سنانا تو آسان ہے، لیکن کیا یہ کافی ہے؟ مفصل جواب دیں تاکہ عملی مشق اور رہنمائی سے نماز میں کمال حاصل ہو سکے۔

    جواب نمبر: 63893

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 545-624/L=7/1437 اس میں کوئی شک نہیں کہ نماز کا اثر دنیاوی امور پر بھی پڑتا ہے لیکن اس طرح کی کسی کتاب کا ہمیں علم نہیں کہ نماز کی کمی کا اثر پوری زندگی پر پڑتا ہے؛ البتہ نماز کو صحیح، خشوع وخضوع سے پڑھنے کی کوشش میں رہنا ضروری ہے، نماز اگر دست ہوگئی تو اس برکت سے دیگر امور بھی درست ہوجائیں گے، اس کے لیے آپ وقتاً فوقتاً کسی عالم کو اپنی نماز دِکھا لیا کریں اور دن میں کم ازکم دو رکعت اس نیت سے پڑھنے کا معمول بنالیں اور خود اس میں اپنی نگرانی کریں کہ میری نماز کس حد تک درست ہوئی ہے اور اس کے لیے اللہ رب العزت سے دعائیں بھی کرتے رہیں۔ ------------------------- نوٹ: ”اپنی نمازیں سنت کے مطابق ادا کریں “ مختصر سا رسالہ ہے اس میں سنت کے مطابق طریقہ نماز لکھا ہے اسے سامنے رکھ کر اپنی نماز درست کرلیں، یہ رسالہ مفتی تقی عثمانی دامت برکاتہم کا ہے۔ (د)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند