• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 609313

    عنوان:

    وطن اصلی اور جائے رہائش واپس آنے پر نماز پوری پڑھیں گے یا قصر کریں گے؟

    سوال:

    سوال : میری پیدائش ممبئی کی ہے . یہاں سے 200 کلو میٹر دور ایک شہر ہے پونے میں پانچ سال پہلے یہاں شفٹ ہو گیا، یہاں پر میرا کاروبار ہے اور اب انشائاللہ یہی رہنے کا ارادہ ہے لیکن یہا ہم کرائے پر رہتے ہیں اور ہمارا ذاتی گھر ممبئی میں ہے ، اسے ہم نے کرائے پر دیا ہوا ہے ، میری اہلیہ کا میکہ بھی ممبئی میں ہے ، اب جب ہم ممبئی جاتے ہیں تو ہمیں نماز قصر ادا کرنی ہو گی یا پوری؟

    جواب نمبر: 609313

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa : 781-650/B=06/1443

     جب ممبئی آپ کا وطن پیدائش ہے تو جب بھی آپ ممبئی جائیں گے تو پوری نماز پڑھیں گے۔ ممبئی آپ کا وطن اصلی ہے۔ پونے میں تو آپ کاروباری تعلق سے رہتے ہیں۔ آپ کا آبائی اور اصلی وطن ممبئی ہے۔ ممبئی سے پونے آتے جاتے وقت راستے میں جو نماز پڑھیں گے وہ قصر پڑھیں گے۔ آپ کی اہلیہ آپ کے تابع رہے گی۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند