• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 608286

    عنوان:

    کو رونا کی وجہ سے فاصلہ کے ساتھ نماز ادا کرنا

    سوال:

    سوال : بندہ ایک عسکری ادارے میں ملازمت کرتا ہے ۔ یہاں پہ مساجد میں ابھی تک مل مل کے جماعت میں کھڑا ہونا منع ہے ۔نمازیوں کے درمیان 2 فٹ کا فاصلہ ہوتا ہے ۔ مل مل کے کھڑا ہونے سے امام صاحب روزانہ منع کرتے ہیں کیوں کہ امام صاحب آرڈر کے پابند ہیں ۔ یہ اعلانات سن سن کے ہم تنگ آ چکے ہیں ۔ سختی بھی صرف مساجد میں ہے ۔ اس کے علاوہ کوئی پوچھتا بھی نہیں ۔ اس صورت حال میں ہمیں اپنے کمروں میں اپنی جماعت کرانا چاہیے یا پھر مسجد میں جماعت کے ساتھ فاصلہ پہ کھڑا ہونا چاہیے ؟ اب تو کو رونا بھی ختم ہو چکا ہے ۔ برائے مہربانی تفصیلی جواب مرہمت فرمائیں ۔

    جواب نمبر: 608286

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa : 595-474/B=05/1443

     پہلے ہمارے یہاں بھی مساجد میں فاصلہ کے ساتھ کھڑے ہوکر نماز پڑھنے پر حکومت کی طرف سے سختی تھی، لیکن کورونا کی بیماری ختم ہونے کے بعد وہ سختی ختم ہوگئی۔ اب سب لوگ مل کر کھڑے ہوتے ہیں اور نماز پڑھتے ہیں۔ لیکن اگر آپ کے یہاں مسجد میں سابقہ سختی حکومت کی طرف سے باقی ہے تو آپ مسجد میں کشادہ ہوکر نماز ادا کرسکتے ہیں، یہ مجبوری ہے۔ نماز فاصلہ کے ساتھ سب کی صحیح ہوجائے گی۔ اس لیے مسجد ہی میں جاکر نماز پڑھنی چاہئے۔ مسجد کے ثواب سے محرومی اچھی بات نہیں ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند