• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 603658

    عنوان:

    دوکان پر نماز پڑھنا

    سوال: میں دوکان پر اکیلا ہوتا ہوں ، کیا میں دوکان پر ہی نماز پڑھ سکتا ہوں؟

    جواب نمبر: 603658

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa:605-467/N=8/1442

     مردوں کے لیے فرض نماز، جماعت کے ساتھ ادا کرنا سنت موٴکدہ ہے اور مشائخ احناف کی ایک بڑی تعداد نے اسے واجب قرار دیا ہے؛ لہٰذا اگر آپ دکا ن پر اکیلے ہوں تو نماز کے وقت دکان بند کرکے مسجد جاکر نماز باجماعت پڑھا کریں، دکان پر فرض نماز اکیلے نہ پڑھیں۔

    (والجماعة سنة موٴکدة للرجال) قال الزاھدي: ”أراد بالتأکید الوجوب إلخ “۔……۔ (وقیل: واجبة وعلیہ العامة) أي: عامة مشایخنا، وبہ جزم في التحفة وغیرھا۔ قال في البحر: ”وھو الراجح عند أھل الواجب“، (فتسن أو تجب) ثمرتہ تظھر في الإثم بترکھا مرة (علی الرجال العقلاء البالغین الأحرار القادرین علی الصلاة بالجماعة من غیر حرج)(الدر المختار مع رد المحتار، کتاب الصلاة، باب الإمامة، ۲: ۲۸۷ - ۲۹۱، ط: مکتبة زکریا دیوبند، ۳:۴۹۹ - ۵۱۰، ت: الفرفور، ط: دمشق)۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند