• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 600579

    عنوان:

    امام بغیر وضو کے نماز پڑھا دے تو مقتدیوں کی نماز کا حکم

    سوال:

    ما حکم صلاة المأمومین إذا أخبرہم الإمام بعد فراغہ من الصلاة أنہ کان علی غیر وضوء عن طریق السہو ؟. نص الجواب الحمد للہ. من أمّ قوما ثم تبین أنہ کان علی غیر طہارة ، فصلاة المأمومین صحیحة ، علی الراجح من قولی العلماء ، وصلاة الإمام باطلة ، فیلزمہ إعادتہا . قال ابن قدامة رحمہ اللہ : " إذا صلی الإمام بالجماعة محدثا , أو جنبا , غیر عالم بحدثہ , فلم یعلم ہو ولا المأمومون , حتی فرغوا من الصلاة , فصلاتہم صحیحة , وصلاة الإمام باطلة . روی ذلک عن عمر وعثمان وعلی وابن عمر رضی اللہ عنہم , وبہ قال مالک والشافعی . روی أن عمر رضی اللہ عنہ صلی بالناس الصبح , ثم وجد فی ثوبہ احتلاما , فأعاد ولم یعیدوا . وصلی عثمان رضی اللہ عنہ بالناس صلاة الفجر , فلما أصبح وارتفع النہار فإذا ہو بأثر الجنابة, فأعاد الصلاة , ولم یأمرہم أن یعیدوا . وعن علی رضی اللہ عنہ أنہ قال : إذا صلی الجنب بالقوم فأتم بہم الصلاة آمرہ أن یغتسل ویعید , ولا آمرہم أن یعیدوا . وعن ابن عمر رضی اللہ عنہما أنہ صلی بہم الغداة , ثم ذکر أنہ صلی بغیر وضوء , فأعاد ولم یعیدوا . رواہ کلہ الأثرم " انتہی من "المغنی" (1/419) بتصرف . وسئلت اللجنة الدائمة للإفتاء عن رجل صلی إماما صلاتی الظہر والعصر وہو جنب ، وکان لا یعلم بجنابتہ . فأجابت : " یجب علیک إعادة صلاتی الظہر والعصر بعد أن تغتسل غسل الجنابة ، ویجب أن تعجل بذلک ، أما من صلی ورائک ہذہ الصلوات فلا یجب علیہم إعادتہا ، فإن عمر رضی اللہ عنہ صلی بالناس صلاة الفجر وہو جنب وقد کان ناسیا فأعاد الفجر ولم یأمر من صلی ورائہ تلک الصلاة أن یعیدہا ، ولأنہم معذورون لکونہم لا یعلمون حدثک " انتہی. "فتاوی اللجنة الدائمة" ( 6 / 266 ) . واللہ أعلم .

    اس فتویٰ کے بارے مین کیا رائے ہے یہ مسئلہ صحیح ہے یا نہیں؟

    جواب نمبر: 600579

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa:157-40T/sn=3/1442

     امام اگر بلا وضو نماز پڑھا دے تو جس طرح امام کی نماز کا لوٹانا ضروری ہے ، اسی طرح مقتدیوں کی نماز کا لوٹانا بھی ضروری ہے ، حنفی مکتبہ فکر کے علما کی تحقیق یہی ہے ؛ کیونکہ از روئے حدیث امام ضامن ہوتا ہے مقتدیوں کی نماز کا؛ لہذا امام کی نماز کے فساد کی صورت میں مقتدیوں کی نماز کے صحیح ہونے کا کچھ مطلب نہیں ہے ، سوال میں جو فتوی نقل کیا گیا ہے ، یہ دیگر مکتبہ فکر کے علما کی تحقیق کے مطابق ہے ۔

    (وإذا ظہر حدث إمامہ) وکذا کل مفسد فی رأی مقتد (بطلت فیلزم إعادتہا) لتضمنہا صلاة المؤتم صحة وفسادا (کما یلزم الإمام إخبار القوم إذا أمہم وہو محدث أو جنب) (الدر المختار)(قولہ وکذا کل مفسد فی رأی مقتد) أشار إلی أن الحدث لیس بقید....(قولہ بطلت) أی تبین أنہا لم تنعقد إن کان الحدث سابقا علی تکبیرة الإمام أو مقارنا لتکبیرة المقتدی أو سابقا علیہا بعد تکبیرة الإمام. وأما إذا کان متأخرا عن تکبیرة المقتدی فإنہا تنعقد أولا، ثم تبطل عند وجود الحدث ح (قولہ فیلزم إعادتہا) المراد بالإعادة الإتیان بالفرض بقرینة قولہ بطلت، لا المصطلح علیہا وہی الإتیان بمثل المؤدی لخلل غیر الفساد (قولہ لتضمنہا) أی تضمن صلاة الإمام، والأولی التصریح بہ وأشار بہ إلی حدیث الإمام ضامن إذ لیس المراد بہ الکفالة، بل التضمن بمعنی أن صلاة الإمام متضمنة لصلاة المقتدی ولذا اشترط عدم مغایرتہما، فإذا صحت صلاة الإمام صحت صلاة المقتدی إلا لمانع آخر، وإذا فسدت صلاتہ فسدت صلاة المقتدی لأنہ متی فسد الشیء فسد ما فی ضمنہ.[الدر المختار وحاشیة ابن عابدین (رد المحتار) 2/ 339،مطبوعة مکتبة زکریا، دیوبند)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند