• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 57369

    عنوان: جس پرفیوم میں الكوحل شامل ہو اس كو لگاكر نماز پڑھنا؟

    سوال: (۱) کیا اسلام میں جینس پینٹ پہنا جائز ہے اور کیا ان میں نماز درست ہے اگر چہ وہ ڈھیلے ہوں اور اعضاء بدن اس میں ظاہر نہ ہو رہے ہوں؟ (۲)کیا جن پرفیوم میں الکوحل شامل ہے جائز ہے اور اس کو لگاکر نماز جائز ہے؟

    جواب نمبر: 57369

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 283-44/D=3/1436-U (۱) (الف) تہبند، پائجامہ، یا جینس کسی بھی لباس سے پیروں کا ٹخنہ ڈھکنا مکرہ تحریمی ہے اس پر حدیث میں سخت وعیدآئی ہے۔ (ب) ایسے چست پینٹ یا جینس پہننا جس سے اعضاء مستورہ ظاہر ہوں مکروہ ہے اسے پہن کر نماز پڑھنا مکروہ تحریمی ہے۔ (ج) جینس پینٹ اگر ٹخنے سے اوپر ہوں اور ڈھیلے ہوں کہ اعضاء بدن ظاہر نہ ہوتے ہوں تو اسے پہن کر نماز پڑھنا جائزہے مگر خلاف اولیٰ ہے ان وجوہ سے، رکوع سجدہ میں بدنمائی ہوتی ہے، صلحاء کے لباس کے خلاف ہے، اسے پہننے والے پیشاب کے قطرات اور استنجا کرنے میں احتیاط نہیں کرپاتے۔ (۲) الکوحل اگر انگور، کھجور، چھوہارے،کشمش سے تیار کیا گیا ہے تو اس کا ایک قطرہ بھی نجس ہے، ایک قطرہ بھی جس دوسری چیز کی بڑی مقدارمیں مل جائے گا اسے بھی نجس کردے گا، لہٰذا ایسے الکوحل سے تیار پرفیوم استعمال نہ کیا جائے جو الکوحل مذکورہ چار چیزوں کے علاوہ سے تیارکیا گیا ہو اسے دوا یا پرفیوم میں استعمال کرنے کی گنجاش ہے، حضرت مفتی محمد تقی عثمانی دامت برکاتہم نے یہ تحقیق ذکر فرمائی ہے کہ ”بالعموم جو الکوحل استعمال ہوتے ہیں وہ مذکورہ بالا چار چیزوں کے علاوہ سے تیار کیا جاتے ہیں اس لیے ان کے استعمال میں گنجائش ہے اوروسعت ہے (تکملہ فتح الملہم ملخصًا) اورمفتی سعید احمد صاحب پالنپوری دامت برکاتہم نے فتاوی دارالعلوم دیوبند جلد اول جدید کے حاشیہ میں تحریر فرمایا ہے کہ ”اب تحقیق یہ آئی ہے کہ اسپرٹ (الکوحل) کیمیکل سے بنائی جاتی ہے، شرابوں سے نہیں بنائی جاتی پس اگر الکوحل نشہ آور ہے تو اس کا پینا حرام ہے مگر وہ پاک ہے، اگر الکوحل بدن پر لگایا گیا تو بدن کا دھونا ضروری نہیں اور عطر وادویہ میں ملایا گیا تو عطر وغیرہ پاک ہیں۔ (فتاوی دارالعلوم جدید، ج۱: ۴۲۳)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند