• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 56856

    عنوان: ڈاڑھی منڈانے والے كی اذان واقامت

    سوال: کیا فرماتے علمااکرام اس شخص کے بارے میں جو داڑھی منڈواتاہے وہ اذان اور اقامت کہہ سکتا ہے ؟ کیا ایسا شخص جس کا تلفظ درست نہیں ہے وہ اذان اور اقامت کہہ سکتا ہے ۔ براہ کرم، جواب مرحمت فرمائیں۔

    جواب نمبر: 56856

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 110-110/Sd=3/1436-U (۱) ڈاڑھی منڈانے والا شخص فاسق ہے،اس کی اذان واقامت مکروہ ہے، ویکرہ أذان الفاسق (الہندیة: ۱/۵۴، شامي، زکریا: ۲/۶۰) (۲) جس شخص کا تلفظ درست نہ ہو، اس کو اذان اقامت نہیں کہنی چاہیے، فتاوی دارالعلوم میں ہے: جو شخص اذان صحیح نہ کہہ سکے، وہ اذان نہ کہے، اذان ایسے شخص سے کہلوانی چاہیے، جو کلماتِ اذان کو صحیح کہے (فتاوی درالعلوم: ۲/۱۰۰، اذان واقامت، ط: مکتبہ دارالعلوم) ویدخل فی الخیار أن لا یلحن في الأذان؛ لأنہ لا یحل لا في الأذان ولا في القراء ة وتحسین الصوت مطلوب لا تلازم بینہما- الخ وظہر من ہذا أن التلحیق إخراج الحرف عما یجوز لہ في الأداء - الخ (غنیة الستملي، ص: ۳۶، فصل في السنن)


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند