• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 55205

    عنوان: ہماری مسجد میں جب امام صاحب گھر جاتے ہیں تو ان کی غیر موجودگی میں ایک مولانا نماز پڑھاتے ہیں جن سے مقتدی ناراض ہیں

    سوال: ہماری مسجد میں جب امام صاحب گھر جاتے ہیں تو ان کی غیر موجودگی میں ایک مولانا نماز پڑھاتے ہیں جن سے مقتدی ناراض ہیں ، اس لیے اس بار جب امام صاحب رمضان میں اپنے گھر گئے تو موٴذن صاحب کو جو کہ مولانا اور حافظ بھی ہیں ، اپنا نائب بنا کر گئے اور ایک جمعہ کو موٴذن صاحب نے امامت کے فرائض انجام بھی دیئے ، لیکن پچھلے امام کو وہی مولانا جو امام صاحب کی غیر موجودگی میں نماز پڑھاتے ہیں جن سے مقتدی ناراض ہیں، نے جبراً نماز پڑھائی موٴذن صاحب کے سب کچھ بتانے کے باوجود ، کیا ایسی صورت میں ان کے پیچھے نماز جائز ہے؟

    جواب نمبر: 55205

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 1306-1306/M=11/1435-U مولانا مذکور سے لوگ ناراض کیوں ہیں؟ اسباب ووجوہات کیا ہیں؟ اگر مولانا سے مقتدیوں کو ناراضگی جائز وجوہ سے ہے تو ایسی حالت میں مولانا کی امامت کراہت سے خالی نہیں، سوال میں ذکر کردہ تفصیل اگر سچ اور واقعہ کے مطابق ہے تو مولانا کو جبراً نماز پڑھانے کا استحقاق نہ تھا، امام صاحب جن کو اپنا نائب بناکر گئے ہیں ان کو نماز پڑھانے کا استحقاق ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند