• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 49458

    عنوان: فرض نماز میں دو رکعت میں سورہ فاتحۃ کے ساتھہ کسی آیت کا ملانا

    سوال: فرض نماز میں دو رکعت میں سورہ فاتحة کے ساتھہ کسی آیت کا ملانا ضروری ہے تو کیا گر میری دو رکعت جماعت میں چھوٹ گء اور مجھے دو رکعت ملی تو کیا مجھے دو رکعتوں میں آیت ملانی پڑیگی اور گر میں نے مغرب کی نماز میں دو رکعت ملی اور ایک رکعت میں آیت ملائی گئی تو کیا مجھے چھوٹی ہوئی رکعت میں آیت ملانی پڑیگی۔

    جواب نمبر: 49458

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa ID: 8-12/N=1/1435-U فرض نماز کی پہلی دو رکعتوں میں سورہٴ فاتحہ کے ساتھ کوئی چھوٹی سورت،کسی سورت سے چھوٹی تین آیتیں یا ایک بڑی آیت (جس میں کم ازکم تیس حروف ہوں) ملانا واجب ہے: قال في الدر (مع الرد ۲/۱۴۹، ۱۵۰ مکتبہ زکریا دیوبند): ”وضم أقصر سورة کالکوثر أوما قام مقامہا، وہو ثلاث آیات قصار، نحو ”ثم نظر، ثم عبس وبسر، ثم أدبر واستکبر“، وکذا لو کانت الآیةأو الآیتان تعدل ثلاثا قصارًا، ذکرہ الحلبي، فيا لأولیین من الفرض“ اھ وانظر الرد أیضًا، اور مسبوق چوں کہ امام کے سلام پھیرنے کے بعد جب اپنی چھوٹی ہوئی رکعتیں ادا کرتا ہے تو وہ قراء ت کے لحاظ سے پہلی رکعتیں ہوتی ہیں کذا في الدر (مع الرد ۲: ۳۴۷) اس لیے چار یا تین رکعت والی فرض نمازوں میں اگر مسبوق کو صرف دو رکعتیں ملیں تو اس پر چھوٹی ہوئی دو یا ایک رکعت میں سورہٴ فاتحہ کے ساتھ کوئی سورت، کسی سورت سے چھوٹی تین آیتیں یا ایک بڑی آیت ملانا واجب ہوگا۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند