• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 39490

    عنوان: نماز كا طريقه

    سوال: میں جب نیت کرتاہوں تو سجدے کی جگہ کو دیکھ رہا ہوں،اللہ اکبر کہتے ہوئے کانوں کو انگوٹھے نہیں لگاتا اور باقی ساری انگلیوں کو ذرا سا قبلہ شریف موڑتاہوں۔ سبحانک اللہ سے شروع کرتاہوں اور سورة پڑھ لینے کے بعد رکوع میں نظر پاؤں کے انگوٹھوں پر رکھتاہوں، رکوع کرنے کے بعد سمیع اللہ پڑھتاہوں اور ساتھ حمداکثیرا طیبافیہ ․․․ اور نظر سجدے کی جگہ رکھتاہوں، پھر سجدے میں جاتاہوں تو نظر ناک پہ رکھتاہوں، ایک سجدہ کے بعد اللہم اغفر وارحم پڑھتاہوں، تشہد میں نظریں گولی کی طرف رکھتاہوں۔ براہ کرم، بتائیں کہ میرا طریقہ نماز درست ہے یا نہیں؟

    جواب نمبر: 39490

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی: 1120-428/L=8/1433 اللہ اکبر کہتے ہوئے انگلیوں کو موڑنے کی ضرورت نہیں، بس ان کو بغیر موڑے ہی رکھا جائے اور قومہ کی دعا میں حمداً کثیراً طیباً مبارکاً فیہ کا بھی اضافہ کرلیں، اسی طرح دونوں سجدوں کے درمیان کی دعا میں اگر وقت ہو جب کہ آپ مقتدی ہوں یا اپنی تنہا نماز پڑھ رہے ہوں تو مکمل دعا اللہم اغفر لي وارحمني واہدني وعافني وارزقني پڑھ لیا کریں، وقت نہ ہونے کی صورت میں اللہم اغفر وارحم بھی پڑھ سکتے ہیں، باقی اور نماز کا طریقہ درست ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند