• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 31721

    عنوان: کیا کسی غصب شدہ زمین پر یا بینک اور انشورنس کمپنی کی تعمیر کردہ مسجد میں نماز پڑھنا جائز ہے یا نہیں؟اگر تو کیا اس مسجد میں پڑھی ہوئی نماز کا اعادہ کرنا ہوگا؟ یا صرف توبہ اور استغفار کرنے سے اللہ راضی ہوجائے گا؟

    سوال: کیا کسی غصب شدہ زمین پر یا بینک اور انشورنس کمپنی کی تعمیر کردہ مسجد میں نماز پڑھنا جائز ہے یا نہیں؟اگر تو کیا اس مسجد میں پڑھی ہوئی نماز کا اعادہ کرنا ہوگا؟ یا صرف توبہ اور استغفار کرنے سے اللہ راضی ہوجائے گا؟

    جواب نمبر: 31721

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی(م): 948=948-6/1432 مغصوبہ زمین اور انشورنس والی رقم سے تعمیر کردہ مسجد میں نماز پڑھنا مکروہ ہے، جو نمازیں پڑھ لی گئیں ان کا اعادہ واجب نہیں، توبہ استغفار کیجیے اور آئندہ احتیاط رکھئے، مسجد اللہ کا پاکیزہ گھر ہے اس کی تعمیر طیب وحلال رقم سے ہونی چاہیے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند