• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 31138

    عنوان: سفر کے دوران نماز کے احکامات سے لا علم ہونا

    سوال: میں کراچی ، پاکستان میں رہتاہوں، ایک دن کے لئے حیدر آباد (کراچی سے 120/ کلومیٹر دور ہے)جانا ہوا ۔ سفر کے دوران نماز کے احکامات سے لاعلم ہوں، برا ہ کرم، تفصیل فرمائیں۔ جب میں سفر میں تھا تو جماعت کے ساتھ نماز پڑھنے کی کوشش کی اور سنتیں بھی ساتھ اداکی ، سوال یہ ہے کہ کیا میری نماز ہوگئی؟راستہ میں ایک مسجد میں جماعت کا شرف اللہ جل جلالہ کے فضل سے ملا، میں نے پوری چارکعات نماز پڑھائی ، کیا یہ نماز ہوگئی؟(اس قت مجھے علم نہیں تھا)جن لوگوں نے میرے پیچھے نماز پڑھی ان کی نماز کا کیا ہوا؟بہت پریشانی ہے اس مسئلہ کی وجہ سے ، دوسرے بھائیوں کی نماز کا پتا نہیں کیا ہوا ہوگا؟اس مسئلہ کے سلسلے میں رہنمائی فرمائیں ،بہت نوازش ہوگی۔

    جواب نمبر: 31138

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی(م): 649=649-4/1432 آپ نے اگر دو رکعت پر قعدہ کیا تھا او راخیر میں سجدہ سہو بھی کرلیا تو آپ کی اور آپ کے پیچھے جن مسافرین نے نماز پڑھی ان سب کی نماز درست ہوگئی، البتہ اگر مقیم حضرات نے بھی آپ کی اقتداء میں نماز پڑھی تھی تو ان کو اپنی نماز کا اعادہ واجب ہے، کیوں کہ اخیر کی دو رکعت میں مقیمین حضرات کی اقتداء صحیح نہیں ہوئی، اور اگر آپ نے سجدہ سہو نہیں کیا تھا تو آپ مسافرین کو بھی نماز کا اعادہ کرلینا بہتر ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند