• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 29323

    عنوان: (۱) فجر کی نماز اگر قضاء ہوجائے تو اس کو کس وقت تک اس دن پڑھ سکتے ہیں؟ دن میں صبح نو یادس بجے پڑھنا صحیح ہے یا نہیں؟ 
    (۲)کیا مرد کے لیے دبر کے غیر ضروری بال صاف کرنا ضروری ہے یا نہیں؟

    سوال: (۱) فجر کی نماز اگر قضاء ہوجائے تو اس کو کس وقت تک اس دن پڑھ سکتے ہیں؟ دن میں صبح نو یادس بجے پڑھنا صحیح ہے یا نہیں؟ 
    (۲)کیا مرد کے لیے دبر کے غیر ضروری بال صاف کرنا ضروری ہے یا نہیں؟

    جواب نمبر: 29323

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی(ل): 324=165-2/1432

    (۱) فجر کی نماز قضا ہوجانے کی صورت میں جلد از جلد ادا کرنے کی کوشش کرنی چاہیے، دن میں نو دس بجے یا اس کے بعد بھی پڑھ سکتے ہیں، البتہ اگر آدمی صاحب ترتیب ہے تو اس کو ظہر کی نماز سے پہلے پڑھ لینا ضروری ہے۔
    (۲) دبر کے غیر ضروری بال صاف کرنے کو علامہ ابن عابدین شامی رحمہ اللہ نے واجب کہا ہے ان کے علاوہ علامہ طحطاوی رحمہ اللہ نے مستحب کہا ہے، بہرحال دبر کے غیر ضروری بال کا صاف کرلینا ہی بہتر ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند