• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 21572

    عنوان:

    اگر فجر کی نماز کے دوران میں سورج نکل گیا تو نماز ہوگی یا نہیں؟ بخاری شریف کی حدیث کے مطابق تونماز ہو جائے گی۔ اگر آپ کا فتوی اس کے مخالف ہو تو کونسی حدیث دلیل ہے؟۔ براہ کرم، بتائیں۔ اور بخاری شریف کی اس حدیث کا کیا جواب ہوگا؟ براہ کرم، جواب مدلل دیں۔میں جامعتہ الہدایہ جے پور، سے گذشتہ سال فارغ ہوا ہوں۔

    سوال:

    اگر فجر کی نماز کے دوران میں سورج نکل گیا تو نماز ہوگی یا نہیں؟ بخاری شریف کی حدیث کے مطابق تونماز ہو جائے گی۔ اگر آپ کا فتوی اس کے مخالف ہو تو کونسی حدیث دلیل ہے؟۔ براہ کرم، بتائیں۔ اور بخاری شریف کی اس حدیث کا کیا جواب ہوگا؟ براہ کرم، جواب مدلل دیں۔میں جامعتہ الہدایہ جے پور، سے گذشتہ سال فارغ ہوا ہوں۔

    جواب نمبر: 21572

    بسم الله الرحمن الرحيم

    فتوی(ل): 759=518-5/1431

     

    فجر کی نماز کے دوران اگر سورج طلوع ہوجائے تو نماز فاسد ہوجاتی ہے ہماری دلیل مسلم شریف کی روایت ہے ثلاث ساعات کان رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ینہانا أن نصلی فیہن أوأن نقبر فیہن موتانا حین تطلع الشمس بازغة الخ (مسلم شریف) بخاری شریف کی روایت کا جواب علامہ انورشاہ کشمیری رحمہ اللہ نے یہ دیا ہے کہ یہ حدیث جماعت کے بارے میں ہے اوقات کے بارے میں نہیں ہے اور حدیث کا معنی یہ ہے کہ جو ایک رکعت امام کے ساتھ پالے وہ دوسری رکعت ملالے اور چاہیے کہ یہ دونوں رکعتیں طلوع اور غروب سے پہلے ہوں ولہا قرائن تفصیل کے لیے عرف الشذي علی الترمذي ۴۷ کا مطالعہ کیا جائے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند