• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 168954

    عنوان: مائیك كی آواز بہت تیز ركھنا؟

    سوال: زید کے پاس ایک مسجد ہے اس کے مائیک کی آواز اتنی تیز ہے کہ جب اذان ہوتی ہے تو زید کے گھرکے بچے بہت ڈر جاتے ہیں اور گھر کے افراد کو ان کی(بچوں کی) نگرانی کرنی پڑتی ہے ، مسئلہ یہ ہے کہ کیا زید کو اب کیا کرنا چاہیے ؟ ایک دو بار مسجد کے امام اور مؤذن سے بھی کہا ہے ،کیا اس طرح سے مائیک کا استعمال کرنا درست ہے ؟

    جواب نمبر: 168954

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa:540-665/sn=8/1440

    اذان کا مقصد لوگوں کو نماز کی اطلاع دینا ہے، تاکہ وقت پر مسلمان مسجد میں آکر جماعت سے نماز ادا کریں، ظاہر ہے کہ آواز جتنی تیز ہوگی، اتنی ہی آسانی سے لوگوں تک پہنچے گی، اس لیے صورت مسئولہ میں اذان کے لیے مائک کا استعمال درست ہے اور اذان کی آواز ہلکی کرانے کے بجائے بچوں کے لیے کوئی تدبیر اختیار کرلی جائے، اُن کے سونے جاگنے کا نظام اذان کو سامنے رکھ کر بنایا جاسکتا ہے اور بچوں کی نیند جیسے جلدی کھل جاتی ہے، ایسے ہی عموما اُن کو دوبارہ نیند بھی جلدی آجاتی ہے، باقی ضرورت سے زائد تیز آواز جو کانوں پر بار ہو کراہت سے خالی نہیں ہے۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند