• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 161709

    عنوان: امام کی ذمہ داریاں کیا ہیں؟

    سوال: ایک امام مسجد کی کیا کیا ذمیداریاں ہوتی ہیں؟ آ پ سے گزارش ہے کہ تفصیلاً جواب عنایت فرمائیں۔

    جواب نمبر: 161709

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa:1116-1022/H=10/1439

    درحقیقت امام پورے محلہ پوری بستی بلکہ پوری قوم کا پیشوا ہوتا ہے اس لیے امام و عالمِ باعمل یا کم ازکم مسائل نماز سے واقف ہونا چاہیے قرآن شریف قواعدِ تجوید کی رعایت کے ساتھ پڑھتا ہو، متقی پرہیزگار خدا ترس ہو امت کا غم اور قوم کی اصلاح کی فکر رکھتا ہو عبادات وغیرہ سنت کے مطابق صحیح اداء کرے اور قوم کے اندر بھی اس جذبہ کو بیدار کرنے کی فکر میں لگا رہے خود بھی بدگمانی بدزبانی غیب جھوٹ وغیرہ سے دور رہے اور دیگر مسلمانوں کو بھی ان گناہوں سے بچانے کی فکر رکھے خوشی کا موقعہ ہو یا غم ہرمعاملہ میں صحیح رہنمائی کرے مسلمانوں کے ساتھ ہمدردی اور خوش اخلاقی سے پیش آتا رہے حضراتِ فقہائے کرام رحمہم اللہ تعالیٰ نے اگرچہ امامت وغیرہ پر تنخواہ لینے کے جواز کا فتویٰ ضرورت کی بناء پر دیا ہے مگر اجرت اور تنخواہ کو مقصود ہرگز نہ بنائے اخلاص کا تقاضہ یہی ہے کہ اللہ پاک کی رضا اور خوشنودی کو مقصود بنائے حضرت نبی اکرم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کی سیرتِ طیبہ اور حضراتِ اکابر سلف صالحین رحمہم اللہ تعالیٰ کے طرز عمل کو حرزِ جان بنائے رہے۔ حاصل یہ کہ امامت کا منصب حقیقة حضرت نبی اکرم روحی فداہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کی نیابت کا منصب ہے اپنے کسی قول وعمل سے اس منصب جلیل کی پامالی کا سبب ہرگز نہ بنے اور قوم کی ذمہ داری یہ ہے کہ خدام مسجد امام وموٴذن بلکہ خادمان مدارس کی حاجت، علمی قابلیت صلاح وتقویٰ کو ملحوظ رکھ کر مشاہرہ وتنخواہ کا انتظام کریں اور ہمیشہ ان کے ادب واحترام کو ملحوظ رکھیں، اپنے کسی طرز وانداز سے ان کے احترام کو پامال نہ کریں۔


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند