• عبادات >> صلاة (نماز)

    سوال نمبر: 159337

    عنوان: سنت پڑھنے والا قعدہ میں ہو اور جماعت کھڑی ہوجائے تو کیا کرنا چاہیے؟

    سوال: (۱) اگر کوئی شخص فرض نماز کی جماعت سے پہلے اپنی سنت یا نفل نماز ادا کر رہا ہو اور آخری رکعت کے قعدہ میں التحیات پر ہو اور جماعت کے لیے اقامت شروع ہو جائے تو وہ کہاں تک پڑھ کر اپنی نماز ختم کرے اور جماعت میں شامل ہو ؟ کیا تکبیر اولی یا پہلی صف کا ثواب حاصل کرنے کے لیئے اتحیات ختم کر کے سلام پھیرا جا سکتا ہے ؟ (۲) اسی طرح اگر آخری رکعت کے قعدہ میں التحیات پر ہو اور جماعت کھڑی ہو چکی ہو اور پہلی رکعت نکلنے کا اندیشہ ہو تو کیا کرنا بہتر ہے ؟

    جواب نمبر: 159337

    بسم الله الرحمن الرحيم

    Fatwa:779-660/sd=7/1439

    (۱) اگر نفل یا سنت کی آخری رکعت کے قعدے میں فرض نماز کے لیے اقامت شروع ہوجائے ، تو التحیات کے بعد سلام پھیر کر جماعت میں شامل ہونا جائز ہے ۔(۲) اگر نفل یا سنت کے آخری رکعت کے قعدے میں ہو اور فرض نماز کی رکعت نکلنے کا اندیشہ ہو، تو التحیات سے پہلے سلام پھیرنا جائز نہیں ہے ، التحیات مکمل کرکے سلام پھیرے ، خواہ فرض کی ایک رکعت نکل جائے ، اس لیے کہ نفل یا سنت شروع کرنے کے بعد اس کی تکمیل واجب ہوتی ہے ، التحیات سے پہلے سلام پھیرنے میں نماز نہیں ہوگی ، اس لیے کہ التحیات پڑھنا واجب ہے۔

    قال الحصکفی : (والشارع فی نفل لا یقطع مطلقا) ویتمہ رکعتین (وکذا سنة الظہر) ( الدر المختار مع رد المحتار : ۵۳/۲، باب ادراک الفریضة ، ط: دار الفکر، بیروت ) 


    واللہ تعالیٰ اعلم


    دارالافتاء،
    دارالعلوم دیوبند